دنیا کی سب سے بڑی سائنسی دستاویزی صحت کی ویب سائٹ آپ کے خاندان کی خوشی اور صحت کے لئے، سائنس اور ایمان کے ساتھ ہم توازن کرتے ہیں

78292976

خاموش قاتل اور اس کے خطرات سے بچیں اور اپنی زندگی سادہ باورچی خانے کی چیزوں کی مدد سے محفوظ بنائیں

خاموش قاتل اور اس کے خطرات سے بچیں اور اپنی زندگی سادہ باورچی خانے کی چیزوں کی مدد سے محفوظ بنائیں


خاموش قاتل اور اس کے خطرات سے بچیں اور اپنی زندگی سادہ باورچی خانے کی چیزوں کی مدد سے محفوظ بنائیں۔

کیا آپ کو کبھی اچانک یہ جان کر شدید حیرانی ہوئ کہ آپ کی امید کے برعکس متواتر معائنے کے دوران بلند فشار خون ہوتا تھا؟ جنسی کمزوری جو  بلند فشار خون کے خلاف ادویات کے استعمال سے جڑی تھی آپ کے لئے مسئلہ بنتی اور آپ کی شرمندگی کا باعث بنتی ؟ کیا آپ نے سوچنا شروع کردیا ہے کہ آپ کو مشکل صورتحال درپیش ہے؟ یہ صحیح ہے کہ یہ خاموش مسائل ہیں لیکن یہ  سنگین خطرہ ہیں اور کئی ادویات کے مضر اثرات ہیں۔

اگر آپ شریان کے بلند فشار خون کا علاج ڈھونڈ رہے ہیں اور آپ کو پیچیدگیوں کا ڈر ہے، خاص طور پر ایتھروسلیروسس اور فالج ہونے اور دماغی فالج یا دماغی نکسیر کا۔ اگر آپ چاہتے ہیں کہ ادویات کی خوراک کو کم کردیں ان کی کئی پیچیدگیوں اور مضر اثرات کی بناء پر جو آپ شریان کے بلند فشار کے لئے استعمال کرتے ہیں تو ہم آپ کو دونوں قدرتی کنواری زیتون کے تیل میں کلونجی کا چکنا عرق اور قدرتی سیب کے سرکے میں کلونجی کےآبی عرق کے استعمال کی تجویز دیتے ہیں کیوں کہ تحقیق اس میدان میں مدد کی تجویز کرتی ہے۔ 

کاسابلانکا مراکش میں ایک مطالعہ کیا گیا تھا اور جو 2000 میں دی جرنل آف تھراپی میں شائع ہوا تھا جس میں محقیقین نے چوہوں پر کلونجی کے عرق کے اثرات کو بطوراینٹی ہائیپر ٹینسو اور اینٹی ڈائیوریٹک تحقیق کی ۔ مطالعے میں چوہوں کو دو گروہوں میں تقسیم کیا گیا۔ پہلے گروہ کو کلونجی کا عرق دیا گیا تھا، دوسرے گروہ کو کیلشیئم روکنے وا لی دوا (Nifedipine) دی گئ، کیلشیئم روکنے وا لی دواجو ایک خاص میکانزم کے ساتھ کام کرتی ہے، جہاں یہ کیلشئیم کو اندر جانے سے روکتی ہے جو پٹھوں کے سکڑنےکے لئے ضروری ہے ۔ یہ ہموارپٹھوں کے فائبر کو سکڑنے سے روکتی ہے اور اس کے نتیجے میں شریان کا فشار خون کم ہوتا ہے (Church et.al., 1980)

تحقیق یہ ثابت کرتی ہے  کہ کلونجی کیلشئیم روکنے والی  دوا سے زیادہ مؤثرتھی۔ چوہوں میں اوسط فشار خون ٪22 فیصد کم ہوا  جنہیں کلونجی کے عرق دئیے گئے تھے جب کہ دوسرے گروپ  کا اوسط فشار خون ٪18 کم ہوا جن کا علاج Nifedipine سے کیا گیا تھا۔ مطالعہ یہ بھی بتاتا ہے کہ کلونجی میں فشار کو کم کرنے میں اضافی اثرات کی خصوصیت ہوتی ہے جو Nifedipine میں نہیں پائی جاتی ہے۔ یہ مشاہدہ کیا گیا تھا کہ چوہے جنہیں کلونجی کا عرق دیا گیا تھا ان میں پیشاب کے اخراج میں اضافہ دیکھاگیا ۔ جب کہ  طبی قوانین  ہمیشہ اینٹی ڈائیوریٹک   کے استعمال کو بطور شریان کے فشار خون کو کم کرنے کے لئے پہلا انتخاب تجویز کرتے ہیں ان مریضوں میں جنہیں فشار ہائپر ٹینشن کے ساتھ تشخیص ہوا ہو۔ کلونجی کے دونوں  اینٹی ڈائیوریٹک کردار اور اینٹی ہائیپر ٹینسو کردار ، شریان کی ہائیپر ٹینشن میں مبتلا مریضوں کےعلاج کے لیےایک زبردست قابلِ غورطریقہ  تجویز کرتے ہیں۔ (Zaoui et.al., 2000) 

اس کے ساتھ ساتھ یہ سوچیں کہ کلونجی کے کوئی مضر اثرات نہیں ہیں۔(Randhawa, 2008) 

جبکہ Nifedipine جو مطالعے میں استعمال کی گئی ہے اس کے مضر اثرات ہیں کیوں کہ کیلشئیم روکنے والی ادویات سردرد، غنودگی، ہاتھوں پیروں میں سوجن، دل کی دھڑکن کی بلند شرح، جلد میں خارش اور کچھ لوگوں میں سانس لینے  میں مشکل کا باعث بنتے ہیں۔(Russell, 1988

چونکہ ہم اپنے متوازن غذائی نظام پر یقین کرتے ہیں کہ ایک چیز سے علاج کافی نہیں ہے باہمی تعاون کی حقیقت کی وجہ سے جسے ہم نے قرآن پاک سے دریافت کیا، جہاں تمام عبارتیں اور آیات میں غذا اور پینے کا ذکر جمع میں اور باہمی تعاون سے کیا گیا ہے نہ کہ واحد کا۔جب کہ ہماری  دیرینہ بیماریوں کا میکانزم تبدیل ہوتا ہے، اسے مختلف مرکبات، غذاؤں اور میکانزم میں ہونا چاہئیے، جو بیماریوں کے میکانزمز کے خلاف دفاعی عمل کرتے ہیں۔ اسی لیے ہم دیکھتے ہیں کہ قرآن پاک میں کسی ایک غذا کا ذکر نہیں کیا گیا بلکہ انکا  ذکر گروہوں میں کیا گیا اور اس میں میڈیکل کے باہمی تعاون کے اصول کے ساتھ مکمل ہم آہنگی ہے۔ پھر کیوں ہم جڑی بوٹیوں کو زیتون کے تیل اور سیب کے سرکے میں شامل کرنا چاہتے ہیں؟ اس کے پیچھے قرآن کےراز کیا ہیں؟ 


اپنی مہارت اور تجربے کی بنیاد پر جو ہم نے قرآن پاک  میں باہمی تعاون کے اصول کو استعمال کر کے حاصل کی ہے، ہم  صاف زیتون کے تیل میں کلونجی کے عرق  اور سیب کے سرکے میں آبی عرق کوبہترین فوائد حاصل کرنے کے لئے استعمال کی تجویز دیتے ہیں کیوں کہ یہ دونوں کئ میکانزم کے ساتھ مداخلت  کرتے ہیں جو کہ شریان کے بلند فشار کا باعث بنتے ہیں۔

2008 میں دی جرنل آف پروسیڈنگ آف نیشنل اکیڈمی آف سائنسز شائع ہوا جو دیکھاتا ہے کہ زیتون کا تیل جو ہماری اشیاء میں کلونجی کے عرق کا محافظ ہے، اولوئیک ایسڈ (٪80-70) پر مشتمل ہوتا ہے جس میں اینٹی ہائیپرٹینسو اثر ہوتا ہے۔ یہ تجویز کیا جاتا ہے کہ زیتون کے تیل  کا استعمال خلیوں کی جھلی میں اولوئیک ایسڈ کی سطحوں کو بڑھاتی ہے، اولوئیک ایسڈ اور دوسرے  فیٹی ایسڈز اپنی نوعیت کی وجہ سے خلیوں کی جھلی کے ڈھانچے میں آسانی سے ضم ہو سکتےہیں۔وہ امکانی طور پر G-Protein سے باہمی عمل کے قابل ہوتے ہیں  جو کہ خلیے کی جھلی کی سطح پر سب سے عام ریسپٹر ہیں ۔ لہذا فیٹی ایسڈز سنگنلز کی ٹرانسڈ کشن کو جھلی کے رسیپٹرزکی سطح سے خلیوں کے اندر جانے سے روک سکتے ہیں ، اس طرح شریان کا فشار خون کم کرتے ہیں۔ (Terés et.al., 2008)  

ایک  تحقیق جس میں قدرتی سیب کے سرکے کے کردار کا مظاہرہ 2001 میں کیا گیا ، جو ہماری اشیاء میں  عرق   کا محافظ ہے، بلند فشار خون میں کمی کو اور خون کے ہائیپر ٹینشن کے خطرے کو کم کرتا ہے۔ یہ اثر قدرتی سیب کے سرکے کی صفت ہے جو ایسیٹک ایسڈ پر مشتمل ہوتا ہے، سرکے کا اہم ایسڈ۔ بہرحال، قدرتی سرکے میں ایسیٹک ایسڈ باہمی عمل کے بار بار ہونے کا اثر رکھتا ہے جو شریان کے فشار خون کی کمی کا باعث ہوتا ہے۔ 

گردے عام حالت میں کام کرتے ہیں جیسے فشار خون کم ہو، اور اس طرح خون کا بہاؤ کم ہوتا ہے اینزائم Reninکی کمی کی وجہ سے جو  اینجیو ٹینسن بدلتے انزائم اینجیو ٹینسن   ون سے اینجیوٹینسن دو میں۔ (اینجیوٹینسن دو خون کی نالیوں پر مضبوط ترین عوامل میں سے ایک  ہے، جو دبانے اور خون کی نالیوں کو پتلا کرنے کا باعث بنتا ہے اور اس کے نتیجے میں بیرونی رگوں کی مزاحمت اور بلند فشار خون کے بڑھانے کا باعث بنتی ہے)۔ جب کہ سرکہ ایسیٹک ایسڈ سے بھرپور ہوتا ہے، یہ گردوں سے خارج کی ہونے والی Renin کو روکنے کے لئے ای طرح کام کرتا ہےاور پھر اس تواتر پن کو روکتا ہے جو اینجیوٹینسن دو کے پیدا کرنے کو روکتا ہےجو فشار خون میں کمی کا باعث بنتا ہے۔(Kondo et.al., 2001) 

حقیقت میں ہم یہاں تصدیق کرتے ہیں کہ شریان کا بلند فشار خون کئی مختلف میکانزمز کا باعث بنتا ہے جس میں ہارمونل بشمول نیورولوجیکل اور یہاں تک کہ انسان کی نفسیاتی حالت سے تعلق رکھتا ہے اور مقامی عوامل سے تعلق رکھتا ہے۔ اسی لئے، کلونجی  کے تیل اور سرکہ خون کے ہائیپر ٹینشن کے ان تمام میکانزمزکے باہمی عمل کی روک تھام میں ناکافی ہے۔ تو ہم کئی اقسام کے عرقیات کے استعمال کی تجویز دیتے ہیں۔ اسی لئے جڑی بوٹیوں کے عرقیات استعمال کریں جو تیل اور سرکے میں محفوظ ہوتی ہیں بطور پورے متوازی ہونے کے توازن سب سے زیادہ میکانزمز کا دفاع کرسکتا ہے جو شریان کا فشار خون بڑھانے کےذمہ دار ہیں۔ اسی طر ح ان جڑی بوٹیوں کا عرق ان تمام میکانزمز سےمقابلہ کرسکتا ہے، اللہ کی مرضی سے۔  اسی طریقے سے، ہم غذائی متوازن نظام کے اصولوں کوحاصل کر سکتے ہیں "ہر بیماری کا علاج ہے  اگر بیماری کی بنیاد کا علاج کیا جائے تو شفا ہوگی اللہ کی مرضی سے۔ "(ٰحدیث امام مسلم سے روایت )



References:

Church, J. & Zsotér, T. T. 1980. Calcium antagonistic drugs. Mechanism of action. Canadian journal of physiology and pharmacology, 58, 254-264.


Kondo, S., Tayama, K., Tsukamoto, Y., Ikeda, K. & Yamori, Y. 2001. Antihypertensive effects of acetic acid and vinegar on spontaneously hypertensive rats. Bioscience, Biotechnology, and Biochemistry, 65, 2690-2694.


Randhawa, M. A. 2008. Black seed, nigella sativa, deserves more attention. J Ayub Med Coll Abbottabad, 20, 1-2.

Russell, R. P. 1988. Side effects of calcium channel blockers. Hypertension, 11, II42-4.


Terés, S., Barceló-Coblijn, G., Benet, M., Álvarez, R., Bressani, R., Halver, J. E. & Escribá, P. V. 2008. Oleic acid content is responsible for the reduction in blood pressure induced by olive oil. Proceedings of the National Academy of Sciences, 105, 13811-13816.


Zaoui, A., Cherrah, Y., Lacaille-Dubois, M. A., Settaf, A., Amarouch, H. & Hassar, M. 2000. [diuretic and hypotensive effects of nigella sativa in the spontaneously hypertensive rat]. Therapie, 55, 379-382.




videos balancecure

اسے دیں



ہمارے خبری خطوط کی تائید کریں


تبصرے

کوئی تبصرے نہیں

تبصرہ شامل کریں

Made with by Tashfier

loading gif
feedback