دنیا کی سب سے بڑی سائنسی دستاویزی صحت کی ویب سائٹ آپ کے خاندان کی خوشی اور صحت کے لئے، سائنس اور ایمان کے ساتھ ہم توازن کرتے ہیں

78292976

خون میں شکر کی کمی میں دونوں قدرتی کنواری زیتون کے تیل اور قدرتی سیب کے سرکے میں کلونجی کےعرق کا نمایاں اثر

خون میں شکر کی کمی میں دونوں قدرتی کنواری زیتون کے تیل اور قدرتی سیب کے سرکے میں کلونجی کےعرق کا نمایاں اثر


خون میں شکر کی کمی میں دونوں قدرتی کنواری زیتون کے تیل اور قدرتی سیب کے سرکے میں کلونجی کےعرق کا نمایاں اثر۔

رسول اللہ صلّی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا"کلونجی میں ہر مرض کا علاج ہے"۔ تو ذیابیطس کے معاملے میں کلونجی کیسے  مفید کردار ادا کرتی ہے؟ کیا کلونجی خون میں شکر کی سطح کو صحیح رکھنے کے لئے مناسب ہے جب کہ اسے روزے کے بعد لیا جائے اور کھانے کے فوراً بعد لیا جائے؟ کیا یہ جسم کے اعضاء کو ذیابیطس کی پیچیدگیوں سے دور رکھنے کے لئے بھی ہے؟

اگر آپ کو حال ہی میں ذیابیطس ہوئی ہے یا یہ آپ کو کئی سالوں سے ہے؟ اور آپ نے اب تک تمام علاج اور جڑی بوٹیوں سے اپنی بیماری کا علاج نہیں پایا۔ ہمارا مشورہ ہے آپ کو کہ دونوں زیتون کے تیل اور قدرتی سیب کے سرکے میں کلونجی کا چکنا اور آبی عرق  استعمال کریں۔ اس کلونجی میں واقعی ہر بیماری کا علاج ہے بشمول ذیابیطس  کابھی۔

حال ہی میں شائع ہونے والا مطالعہ جو ٹوہوکو جرنل آف ایکسپیریمنٹل میڈیسن دسمبر 2003 میں شائع ہوا، محقیقن نے 15 چوہوں پر مطالعہ کیا، جہاں  اسٹریپٹو زوٹوسن  ( جو کہ لبلبہ میں بیٹا خلیوں کے لئے کیمیائی ٹاکسن ہے، یہ سائنسی تحقیق میں بھی لیبارٹری کے جانوروں میں شکر کی سطح کو بڑھانے کے لئے استعمال ہوتی ہے ) سے  ان میں داخل کر کے ان چوہوں کےخون میں شکر بلند کی گئی تھی۔ بعد میں چوہوں کودو گروہوں میں تقسیم کردیا گیا: پہلے گروہ  کے چوہوں کو کلونجی کا عرق تیس دنوں تک روزآنہ دیا گیا تھا۔ دوسرے گروہ کو ایک نمک کا محلول دے کر کلونجی کے عرق سے محروم رکھا گیا تھا۔ مطالعہ سے معلوم ہوا کہ  چوہوں کی ذیابیطس کے لئے کلونجی کا انتظام خون میں شکر کی نمایاں کمی کا باعث بنا۔ اس کے علاوہ، یہ بھی ثابت ہوگیا کہ جن چوہوں کو کلونجی دی گئی تھی یہ ان چوہوں کے خون میں انسولین کا اخراج بڑھاتی ہے۔ اس کے پیچھے یہ راز تھا کہ کلونجی کا عرق (لبلبے میں) بیٹا خلیوں کے پھیلاؤ کی شرح کو بڑھاتا ہے جو انسولین کے اخراج کی ذمہ دار ہوتی ہے۔ بعد کے نتیجے کو حیرت انگیز سمجھا گیا خاص طور پر کہ لبلبہ صحیح کام نہ کرنے میں بنیادی میکانزمز میں سے ایک ہے اپنے ٹشو کو توڑنا اور ان کی بڑے پیمانے پر کمزوری، جیسا کہ تحقیق نے تجویز کیا۔اسی لیے، کلونجی کا اثر صرف چوہوں پر شکر کی سطحوں کو معمول پر لانے میں بہتری تک ہی نہیں ہے بلکہ یہ انسولین کے اخراج کی مقدار کو بڑھاتی ہے بلکہ ذیابیطس کے مریضوں میں سب سے زیادہ اہم پیچیدگیوں کے خلاف جوابی کاروائی کرنے میں شامل بھی ہوتی ہے، جیسا کہ بڑے پیمانے پر لبلبے کی کمزوری اور اس کا وقت کے ساتھ ساتھ کم ہونا۔(Kanter et.al., 2003) 

چونکہ ہم اپنے متوازی غذائی نظام پر یقین کرتے ہیں کہ ایک چیز سے علاج کافی نہیں ہے باہمی تعاون کی حقیقت کی وجہ سے جسے ہم نے قرآن پاک سے دریافت کیا، جہاں تمام عبارتیں اور آیات میں غذا اور پینے کا ذکر جمع میں اور باہمی تعاون سے کیا گیا ہے نہ کہ واحد کا۔جب کہ ہماری معیادی بیماریوں کا میکانزم تبدیل ہوتا ہے، اسے مختلف مرکبات، غذاؤں اور میکانزم میں ہونا چاہئیے، جو بیماریوں کے میکانزمز کے خلاف دفاعی عمل کرتے ہیں۔ اسی لیے ہم دیکھتے ہیں کہ قرآن پاک میں کسی ایک غذا کا ذکر نہیں کیا گیا بلکہ انکا  ذکر گروہوں میں کیا گیا اور اس میں میڈیکل کے باہمی تعاون کے اصول کے ساتھ مکمل ہم آہنگی ہے۔ پھر کیوں ہم جڑی بوٹیوں کو زیتون کے تیل اور سیب کے سرکے میں شامل کرنا چاہتے ہیں؟ اس کے پیچھے قرآن کےراز کیا ہیں؟ اپنی مہارت اور تجربے کی بنیاد پر جو ہم نے قرآن پاک  میں باہمی تعاون کے اصول کو استعمال کر کے حاصل کی ہے، ہم کنواری زیتون کے تیل میں سونف کے چکنے عرق کے استعمال کی تجویز دیتے ہیں جیسا کہ قدرتی کنواری زیتون کا تیل  کلونجی کا محافظ ہے جو خون میں شکر کی سطح کو کم کرنے میں اہم کردار ادا کرتا ہے ۔  جیسا کہ ہم جانتے ہیں کہ گلوکوز کی سطحوں کا معمول کی حد سے قریب ہونا سے ذیابیطس کی شرح میں کمی واقع ہوتی ہے اور ریٹینا، گردوں، خون کی باریک نالیاں، اعصاب اور دفاعی نظام کی پیچیدگیوں کو کم کرتا ہے۔

ایک مطالعہ جو جرنل آف فوڈ بائیوکیمیسٹری 2011 میں شائع ہوا تھا، دیکھاتا ہے کہ زیتون کا تیل فینولک مرکبات پر مشتمل ہوتا ہے جس کی خصوصیت چھ کاربن کے ایٹموں کے چھلےکا ڈھانچہ جس کے ساتھ ہائیڈروایکسائل گروپ جڑا ہوتا ہے جو کام کرتا ہے دو مختلف کاربوہائیڈریٹ کے ہاضمے کے انزائم کی رکاوٹ پراور انہیں توڑتا ہے، جن کے نام ہیں:الفا-گلوکوزائیڈاس اور الفا-ایمی لاس۔ یہ دونوں انزائم حاضمے کی نالی میں کاربوہائیڈریٹ کے ہضم ہونے اور ہائیڈرولائزز کے ذمہ دار ہوتے ہیں۔ یہ ذکر اہمیت رکھتا ہے کہ یہ شکر اور ان کو گلوٹامیٹ کینڈیز میں تبدیل کرتا ہے، اہم بات یہ ہے کہ کاربوہائیڈریٹ، پروٹینز یا چربی کی تمام اقسام سے آنت کھانے میں کسی قسم کے بڑے مرکبات جذب نہیں کرتی ہے جب تک کہ ان کو عمارتی حصوں میں تبدیل نہ کردیا جائے اور یہ نہیں ہوسکتا جب تک کہ تمام ضروری انزائمز بشمول الفا-گلوکوزائیڈاس اور الفا-ایمی لاس  فعال نہ ہوجائیں۔ پس زیتون کا تیل نظام انہضام میں کھانے سے بننے والی شکر کی مقدارکو کم کرتا ہےجس کی وجہ سے شکر کا داخل ہونا نا مکمل ہوتا ہے۔ اسی لئے، زیتون کا تیل پھر جذب شدہ شکر کو کم کرنے سے خون میں گلوکوز کے مالیکولوں میں کمی کا باعث بنتا ہے۔ اس کے علاوہ، زیتون کا تیل ایک اور اہم کردار شکر کی سطح کو کم کرنے  کے لئے اپنی اہلیت میں پیش کرتا ہے، یہ انسولین کے اخراج میں زیادتی کے ذریعے نہیں ہوا بلکہ انسولین کے لئے انسولین رسیپٹر کی حساسیت میں اضافے سے ہوا ہے۔ بہت سے لوگ جو سراور ہاتھ پاؤں کے علاوہ حصوں میں جلد کے نیچے چربی کی جمع ہونے سے ٹرنکل (Truncal) موٹاپے میں مبتلا ہوتے ہیں ذیابیطس کا شکار ہوتے ہیں۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ ان حصوں میں ٹرائیگلیسرائیڈ  جمع ہوتا ہے جو کولہوں کے لئے کمر کے گھیرے کو بڑھانے کا باعث بنتا ہے جو انسولین لینے والوں کے لیے انسولین کیحساسیت میں کمی کے ساتھ جڑا ہوتا ہے۔ انسولین (اہم) موجود ہے لیکن یہ چابی تالا (انسولین رسیپٹر ) کھولنے کے قابل نہیں ہے۔ یہ تالا کھولنے کے لئے چابی کی ناکافی اہلیت کی صفت رکھتی ہے۔(Loizzo et.al., 2011) 

اور ہم یہاں باہمی تعاون کے اصول کو واضح کرنے کے لئے واپس آئیں ہیں، جو کئی قدرتی غذاؤں  کے ہر عمل کو کئی مختلف میکانزم سے ملاتا ہے۔ تاکہ ہم بیماری پر قابو پاسکیں یہ وہ ہے جن کے مضر اثرات کی وجہ سے ہم متواتر علاج  نہیں کرسکتے ہیں  اگر ایک دوسرے کے ساتھ ملائیں ۔پس کلونجی کا عرق لبلبے کو بڑے پیمانے پر بڑھاتا ہےاور خارج شدہ انسولین کی مقدار کو بڑھاتا ہے۔ اس کے علاوہ زیتون کا تیل، عرق کا محافظ، انسولین کے لئے انسولین رسپٹر کی حساسیت بڑھانے میں اہم کردار ادا کرتے ہیں۔ جس کے نتیجے میں، آنتوں سے شکر جذب کرنے کی مقدار میں کمی ہوتی ہے۔ جب سے کئی دوسرے میکانزمز ذیابیطس کی پیچیدگیوں کا باعث بن رہے ہیں، ہم تجویز کرتے ہیں کہ آپ کئی اقسام کی جڑی بوٹیاں تیل اور سرکے کے ساتھ استعمال کریں ہر ایک میکانزم سے مقابلہ کرکے ذیابیطس کی پیچیدگیوں کا باعث بنتا ہے تو  ذیابیطس کو ختم کرنے کے لئے تیل اور سرکے کا استعمال کریں اللہ نے چاہا ۔ جانئیےکیوں بےشمار جڑی بوٹیوں اور محلول سے فائدہ نہیں ہوتا جب انہیں خشک استعمال کیا جاتا ہے؟ اور ہم کیوں تمام عرق سے تمام فائدے حاصل کرتے ہیں، ان لنکوں پر کلک کریں۔

مزید فوائد کے لئے ہم قدرتی سیب کے سرکے کے استعمال کی تجویز دیتے ہیں جو کلونجی کے آبی عرق کا محافظ ہے۔ کیوں کہ یہ خون میں شکر کی سطح کوکم کرنے میں کردار ادا کرتا ہے۔ ایک مطالعہ جو 1984 میں کیا گیا تھا جس میں دیکھایا گیا تھا کہ قدرتی سیب کے سرکے کا خون میں شکر کی سطح کے لئے ہائیپوکولیسٹرول ایمک کا اثرپیسٹن کا صفت ہے جو کہ پانی میں حل ہونے والا فائیبر ہے جو کہ قدرتی سیب کے سرکے میں پایا جاتا ہے اور یہ پولی سیچارائیڈز کی ایک قسم ہے جو سیب کے خلیوں کی  دیوار کے ڈھانچے میں موجود ہوتا ہے۔ یہ پایا گیا تھا کہ پیکٹن میں جو سیب کے سرکے میں موجود ہوتا ہے(Blanco-Gomis et.al., 1998) 

ساکن پانی کی تہہ کی موٹائی کو بڑھاتا ہےجو نالی آنت کی پرت ہے۔یہ آنتوں میں نمکیات اور گلوکوز کے جذب کرنے کی  شرح سست کرتی ہے۔یہ مطالعے سے معلوم ہوا ہے جو تصدیق کرتا ہے کہ پیکٹن فراہم کرنے پر جذب کرنےکی شرح  3.4 منٹوں سے 5.7 منٹوں تک بڑھ جاتی ہے۔ پس، اس طرح پیکٹن ساکن پانی کی تہہ کو موٹا کر کے آنتوں کے اندر گلوکوز جذب کرنے کو کم کرتا ہے۔یہ خون میں گلوکوزکو سست تر اور آہستہ آہستہ اٹھان فراہم کرتا ہے۔ یہ خون میں شکر کی سطح کے اور  اچانک شکر کی سطح کے بدلنے کے وہم سے بچاتا ہے  جس کا انتظام  لبلبہ بھی نہ کرسکتا ہو۔ پس، ہم نے میڈیکل باہمی تعاون اور کلونجی کے عرق اور قدرتی سیب کے سرکے کے درمیان شراکت کا اصول دیکھا جو مختلف اقسام کی فائبر پر مشتمل ہوتا ہے جو ذیابیطس کی پیچیدگیوں کو ختم کرتا ہے۔ (Flourie et.al., 1984) 

خلیے روزآنہ کیسے مرتے ہیں؟مرنے والے خلیے کتنے ہوتے ہیں؟ یہ خلیے کہاں جاتے ہیں؟متوازی غذائی نظام کا کیا کردار ہے اور کیسے اسے بیمار خلیوں سے خلیوں کے ساتھ برقرار رکھنے میں بدلا جاتا ہے؟ یہ ایک انوکھے اصول کی دریافت ہے۔


References:

Blanco-Gomis, D., Herrero-Sanchez, I. & J. Mangas Alonso, J. 1998. Characterisation of apple cider cultivars by chemometric techniques using data from high-performance liquid chromatography and flow-injection analysis. Analyst, 123, 1187-1191.


Flourie, B., Vidon, N., Florent, C. & Bernier, J. 1984. Effect of pectin on jejunal glucose absorption and unstirred layer thickness in normal man. Gut, 25, 936-941.


Kanter, M., Meral, I., Yener, Z., Ozbek, H. & Demir, H. 2003. Partial regeneration/proliferation of the β-cells in the islets of langerhans by nigella sativa l. In streptozotocin-induced diabetic rats. The Tohoku journal of experimental medicine, 201, 213-219.


Loizzo, M. R., Lecce, G. D., Boselli, E., Menichini, F. & Frega, N. G. 2011. Inhibitory activity of phenolic compounds from extra virgin olive oils on the enzymes involved in diabetes, obesity and hypertension. Journal of Food Biochemistry, 35, 381-399.



videos balancecure

اسے دیں



ہمارے خبری خطوط کی تائید کریں


تبصرے

کوئی تبصرے نہیں

تبصرہ شامل کریں

Made with by Tashfier

loading gif
feedback